امریکی صدر باراک اوباما کا شکاگو میں الوداعی خطاب


 بدھ ۱۱ جنوری ۲۰۱۷    ۴ ماہ پہلے     ۴۸     شکاگو   پرنٹ نکالیں
امریکی صدر خطاب کرتے ہوئے آبدیدہ ہوگئے(فائل فوٹو)

رپورٹ    ویب ڈیسک   :شکاگو: امریکی صدر باراک اوباما کا کہنا ہے کہ ہم نے نائن الیون کے ماسٹر مائنڈ کو ختم کیا اب امریکہ پہلے سے زیادہ بہتر اور محفوظ ملک ہے، تاہم ابھی بھی کئی مسائل کا سامنا ہے، جبکہ مسائل کا حل طویل اور دیر پا پالیسیوں میں ہے۔ امریکی صدر باراک اوباما نے شکاگو میں اپنی دور صدارت کا الوداعی خطاب کیا۔ اس موقع پر ان کو سننے کے لیئے ہزاروں لوگ موجود تھے۔ اپنے خطاب میں اوباما کا کہنا تھا کہ اقتدار کی پرامن منتقلی امریکی جمہوریت کی علامت ہے، جبکہ امریکہ کا مستقبل محفوظ ہاتھوں میں ہے، تاہم جمہوریت کو ہلکا نہیں لینا چاہیے۔ وائٹ ہاؤس خاندانی کاروبار نہیں ہے۔ باراک اوباما کا کہنا تھا کہ عوام ایک دوسرے کے نقطۂ نظر کو سمجھنے کی کوشش کریں کیونکہ ہمیں اوروں کو توجہ دینی اور سننا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ امریکی مسلمانوں کےخلاف پالیسی کومسترد کرتا ہوں، باہرسےلوگ آئیں گےتوامریکامضبوط ہوگا، جبکہ میرےنزدیک سب برابرہیں۔ امریکی صدر کا کہنا تھا کہ کہ کوئی دہشت گردتنظیم گزشتہ دس سال میں امریکا میں کارروائی نہیں کرسکی، جبکہ روس اورچین جیسے حریف بھی آج ہمارامقابلہ نہیں کرسکتے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وہ وائٹ ہاؤس سے خطاب کرنے کی بجائے وہیں جانا چاہتے تھے جہاں سے ان کے اور خاتون اول مشیل اوباما کے لیے یہ سب شروع ہوا تھا۔ صدر اوباما اہلیہ کا ذکر کرتے ہوئےآبدیدہ ہوگئے۔ واضح رہے کہ یہ باراک اوباما کا شکاگو کا آخری دورہ اور ایئر فورس ون پر 445واں سفر ہے۔ امریکی صدر نے 2008 میں منتخب ہونے کے بعد پہلا خطاب بھی شکاگو میں ہی کیا تھا۔ اوباما کے اقتدار کے خاتمے کے بعد اب نامزد صدر ڈونلڈ ٹرمپ 20 جنوری کو بطور امریکی صدر اپنا عہدہ سنبھال لیں گے۔جو کہہ چکے ہیں کہ وہ صدر اوباما کی جانب سے کیے جانے والے بعض معاہدے ختم کر دیں گے۔