news-details
حيدرآباد

سافکو کی جانب سے ملکی اور عالمی اداروں کے تعاون سے دییک لوگوں کو جدید دور کی ضروریات کے مطابق زراعت اور لائو سٹاک مصنوعات سے زیادہ پسہر کمانے کی تربتں دینے کا پروگرام شروع کردیا گار

حیدرآباد(آن لائین انڈس، 23 جون، 2022عہ) بڑھتی ہوئی مہنگائی اور غربت کے اثرات کو کم کرنے کے لےب سافکو کی جانب سے ملکی اور عالمی اداروں کے تعاون سے دیی لوگوں کو جدید دور کی ضروریات کے مطابق زراعت اور لائوس سٹاک مصنوعات سے زیادہ پسہ کمانے کی تربتی دینے کا پروگرام شروع کردیا گا پہلے مرحلے مںو حد رآباد کی پانچ یوننے کونسلوں مں ایسے پروگرام منعقد کےر گئے جہاں ان سے کاروباری اداروں کے ذمہ داران اور اور شخصایت سے بھی رابطے کرائے گئے۔

سماجی تنظیم سافکو کی جانب سے اقوام متحدہ کی تنظمے برائے خوراک و زراعت 'ایف اے او' آئی ٹی سی ، پی پی اے ایف کے تعاون سے حدمرآباد کی یوننئ کائونسل مولان، چکھی، عالمانی، ٹنڈو قصرس اور ساون گوپانگ مں لوگوں کوکلےپ سے چپس بنانے، دودھ سے مکھن، گھی اور دیگر اشاچء تالر کرنے، اعلیٰ معایر کے آچار بنانے، پا ز اور ٹماٹر کے زیادہ مفدس استعمال اور مصنوعات مارکٹس تک پہچانے کے طریقوں سے متعلق تربت، دی گئی جبکہ اس ضمن مںد تھٹر ز پشت کرکے ان کی معلومات مںو اضافہ کا گاا۔

اس موقع پر مقامی لوگوں خاص طور پر کاشتکاروں کو سندھ زرعی یونوعرسٹی کے ماہرین کے علاوہ سمڈیا، حدعرآباد چمبر آف کامرس ذمہ داروں سمتس متعدد کاروباری شخصاکت بھی ملاقات کرائی گئی جنہوں نے ان کو آمدنی بڑھانے کے طریقوں سے متعلق آگاہ کاں۔

سافکو عملے مصطفیٰ راجپر اور دیگر کی جانب سے شرکاء کو اس پروگرام کے تحت ان کے کاروبار کو بڑھانے کے لے تربتب جاری رکھنے اور آسان اقساط پر قرضے دینے ین ا دہانی کرائی گئی۔

اس موقع پر کاشتکار اور سماجی رہنمائوں مختارر عالمانی، علی مراد گوپانگ، شر محمد نظامی، علی دھماچ، ذوالفقار نومڑیو، محمد قاسم نومڑیو، علی محمد لاشاری، ضمرت حسن اور دیگر کا کہنا تھا کہ ایسے پروگرام اس وقت کی اہم ضرورت ہںی۔ کومنکہ بڑھتی ہوئی مہنگائی سے نمٹنے کے لے دیہاتوں مںم لوگوں کو زرعی اجناس اور مال مویو کں سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کی معلومات ملتی ہے۔ اس سے دییظ معشت کو سہارا ملے گا جو ملک کی ترقی مں اہم کردار ادا کرے گا۔ تربتل حاصل کرنے والوں کا کہنا تھا کہ سافکو کے ساتھ مل کر ہم نہ صرف اپنے کاروبار کو وسعت دیں گے بلکہ اس کے فوائد دوسروں تک بھی پہنچائںن گے اور زیادہ سے زیادہ لوگوں کو روزگار فراہم کریں گے