امریکا نے ایٹمی ہتھیاروں کی تعداد میں اضافے پر غور شروع کردیا

news-details

واشنگٹن : (ہفتہ: 08 جون 2024ء)  امریکا نے عشروں سے جاری کٹوتی پالیسی ختم کرتے ہوئے ایٹمی ہتھیاروں کی تعداد میں اضافے پر غور شروع کردیا ہے۔ امریکی میڈیا کے مطابق یہ اقدام روس اور چین سے مقابلے کی خاطر کیا جارہا ہے۔

وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کونسل کے ڈائریکٹر کے حوالے سے امریکا کی نئی حکمت عملی میں مقابلے پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ روسی میڈیا کے مطابق صدر بائیڈن نے ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال کی شرائط سے متعلق تازہ ترین ایگزیکٹو آرڈر پر حال ہی میں دستخط کیے ہیں ، اس کے ساتھ ہدایات میں چین کے ایٹمی ہتھیاروں کی ترقی اور تنوع سے نمٹنے پر بھی زور دیا گیا ہے۔ امریکا کی جانب سے روس، شمالی کوریا اور چین سے ایک ساتھ نمٹنے کیلئے خبردار کیا گیا ہے۔

وائٹ ہاؤس کے معاون نے بیان میں کہا کہ امریکی عوام، اتحادیوں اور شراکت داروں کی حفاظت کے لیے مزید جوہری ہتھیاروں کی ضرورت ہے۔ آئندہ برسوں میں مخالف ممالک کی جانب سے خطرات بڑھنے کے خدشے کے باعث امریکا کو اپنے اسٹریٹیجک جوہری ہتھیاروں  میں اضافہ کرنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ آنے والے برسوں میں ہم ایسے مقام پر پہنچ سکتے ہیں جہاں جوہری ہتھیاروں کی ضرورت میں اضافہ ہو جائے گا۔صدر نے یہ فیصلہ کرلیا تو اس پر عمل درآمد کے لیے پوری طرح تیار رہنا ہوگا۔مبصرین کے مطابق امریکی صدرجو بائیڈن  کو غزہ میں جنگ بندی کے لیے پیش کیے گئے روڈ میپ کے اعلان کے کچھ  ہی عرصے بعد امریکا کا  جوہری ہتھیاروں کو بڑھانے کا اعلان حیران کن اورغیر معمولی ہے۔